فلم انڈسٹری کی ترقی کیلیے سنسر بورڈ نظام کو بہتر بنانا ہوگا، صنم بخاری

لاہور: نارویجن ماڈل و اداکارہ صنم بخاری نے کہا کہ پاکستان فلم انڈسٹری کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کیلیے سب سے پہلے فلم سنسر بورڈ کے نظام کوبہتربنانا ہوگا۔

’’ایکسپریس‘‘ سے گفتگو کرتے ہوئے صنم بخاری نے کہا کہ پاکستان فلم انڈسٹری کی گزشتہ دو دہائیوں کی بات کریں تو فلم کا شعبہ شدید بحران میں تھا اور اس کی بربادی کا ذمہ دارجہاں یہاں کام کرنے والے پروڈیوسروں، ہدایتکاروں، فنکاروں اور سٹوڈیو مالکان کو ٹھہرایا جاتا ہے وہیں اس کا ذمہ دار مرکزی فلم سنسربورڈ کو بھی ٹھہرایا جائے تو غلط نہ ہوگا۔

صنم بخاری نے کہا کہ اگر غیر معیاری فلموں کو سنسرسرٖٹیفیکٹ جاری نہ کیے جاتے تو آج پاکستان فلم انڈسٹری شدید بحران سے دوچار نہ ہوتی۔ نگارخانے اور سینما گھر ویران نہ ہوتے، لوگ سستی ترین تفریح سے محروم نہ ہوتے، فلمی ستاروں کی عزت ہوتی اور لوگ ان کو اچھے لفظوں میں یاد کرتے مگر مفادپرستوں نے اپنی جیبیں بھرنے کیلیے ایسے نان پروفیشنل پروڈیوسروں کو یہاں کام کرنے کا موقع دیا کہ انھوں نے پیسے کے بل بوتے پر اپنی من مانیاں کیں اور اس کے نتائج سے بے خبر ڈائریکٹر، رائٹروں نے ان کی مانتے ہوئے فلمسازی کے شعبے کو تباہی کے دہانے پر پہنچا دیا۔

اداکارہ نے کہا کہ غنڈوں، بدمعاشوں اور ذات برادریوں کی پروموشن کرتی فلمیں بننے سے جہاں فلمی میوزک کی جگہ ایسے گیتوں کو ملنے لگی جن کو شائقین کی اکثریت سننا اور دیکھنا پسند نہیں کرتی تھی۔ اس کے علاوہ فلموں کی کہانیاں، کاسٹنگ اور لوکیشنز سمیت تکنیکی شعبے پر بھی خاص توجہ نہیں دی گئی جس کے نتیجہ میں فلم انڈسٹری کی تباہی ہونے لگی۔ بہت سے لوگ اس سے دور ہوئے اور بہت سے ٹی وی کے ساتھ وابستہ ہوگئے۔

صنم بخاری نے کہا کہ پاکستان فلم انڈسٹری کو سدھارنے کیلیے سب سے اہم کردار صرف اور صرف سنسربورڈ ہی ادا کر سکتا ہے۔ اگر آج بھی انھوں نے غیر معیاری فلموں کو نمائش کی اجازت دینے کا سلسلہ بند نہ کیا تو پھر انٹرنیشنل مارکیٹ تک پہنچنے کی بات کرنا فضول ہوگا۔

 

The post فلم انڈسٹری کی ترقی کیلیے سنسر بورڈ نظام کو بہتر بنانا ہوگا، صنم بخاری appeared first on ایکسپریس اردو.